اسلام ناروے میں دوسرا بڑا دین، لیکن؟

ناروے میں اگرچہ اسلام ایک اقلیتی دین ہے لیکن  مسلمانوں کی تعداد کے لحاظ سےعیسائیت کے بعد یہ ملک کا دوسرا بڑا دین ہے ۔ ناروے  میں مسلمانوں کی آمد کے متعلق تاریخ پر نگاہ ڈالی جائے تو اس کی ابتدا ناروے کے بادشاہ ہاکون ہاکونسن کے عہد  سے جا ملتی ہے ۔ ہاکون ہاکونسن  نے سن 1260ء میں تیونس کے سلطان  کے دربار میں اپنے سفیروں کو بڑے قیمتی تحفے تحائف کے ساتھ بھیجا اور اپنی اِس خواہش کا اظہار کیا کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *